05 دسمبر 2021
تازہ ترین

عوام کیلئے 120ارب کا ریلیف پیکیجٜ پٹرول مزید مہنگا ہوگا، وزیر اعظم

 اقتصادی اشاریے درست سمت گامزن، 2بڑے خاندانوں سے درخواست ہے آدھا پیسے واپس لے آئیں، اشیا کی قیمتیں آدھی کر دونگا، قوم سے خطاب   اسلام آباد ٟ جہان پاکستان نیوزٞ وزیر اعظم عمران خان نے مہنگائی سے تنگ عوام کیلئے 120ارب ریلیف پیکیج کا اعلان کرتے ہوئے پٹرولیم مصنوعات مزید مہنگی  ہونے کی  بھی نوید سنا دی اور کہا ہے کہ  مہنگائی کو دیکھتے ہوئے ہم  120ارب روپے کا ریلیف  پیکیج لارہے ہیں، اس سے 13کروڑ لوگ مستفید ہوں گے، 6ماہ تک  2کروڑ خاندانوں کے لئے گھی، آٹا اور دال کی قیمتوں پر 30فیصد رعایت ملے گی، 40لاکھ خاندان کو سود کے بغیر قرض دیں گے، کامیاب پاکستان پروگرام کیلئے 1400ارب روپے دیں گے، مارچ 2022تک پنجاب میں صحت کارڈ کا اجرا کر دیا جائےگا۔ 30سال سے جو لوگ پاکستان سے پیسے لوٹ کر باہر لیکر گئے، دو بڑے خاندانوں سے درخواست ہے آدھا پیسے واپس لے آئیں اس کے بعد کھانے پینے کی چیزوں کی قیمت آدھی کر دوں گا۔ ہمارا خسارہ بڑھتا جارہا ہے،  پٹرول کی قیمت بڑھانا پڑے گی۔ اقتصادی اشاریے درست سمت کی جانب گامزن ہیں۔ بدھ کو ریڈیو اور ٹی وی پر قوم سے خطاب کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ آج ہم پاکستان کی تاریخ کے سب سے بڑے فلاحی پروگرام کا افتتاح کر رہے ہیں ، ہمیں اس ملک کو فلاحی ریاست کی طرف لےکر جانا ہے، احساس  پروگرام کی ٹیم نے 3سا ل میں ڈیٹا اکٹھا کیا، ڈیٹا کے بغیر سبسڈی دینا آسان نہیں، ہمیں جب حکومت ملی تھی تب معاشی حالات بہت خراب تھے، ہمیں بیرون ممالک سے لیا گیا قرض واپس دینا تھا لیکن ہمارے پاس پیسے نہیں تھے، سعودی عرب، یو اے ای او چین کے شکر گزار ہیں جنہوں نے ہماری مدد کی ورنہ ہم دیوالیہ ہوجاتے، اس کے باوجود ہمیں آئی ایم ایف سے رجوع کرنا پڑا، اگر ڈیفالٹ کر جاتے تو روپیہ گر جاتا اور مہنگائی آسمان پر ہوتی۔ وزیر اعظم نے کہا کہ ہمیں ملک کی معیشت کو مستحکم کرنے میں ایک سال  لگا اور اس کے بعد کرونا آگیا،  اس سے پاکستان  ہی نہیں پوری دنیا متاثر ہوئی، بھارت میں کرفیو لگا تو ہم پر کافی دبائو تھا کہ آپ کیوں نہیں لاک ڈائون لگاتے، ہمیں خوف تھا کہ کرونا کیس بڑھے تو حالات خراب ہوجائیں گے، پاکستان نے بہتر طریقے سے کرونا کا مقابلہ کیا، دنیا نے ہماری تعریف کی۔ وزیر اعظم نے کہا کہ ہم نے کرونا کی وبا کے دوران اپنی زراعت کے شعبے کو بچایا، جس کے نتیجے میں چاول کی پیداوار میں  13.4فیصد اضافہ ہوا، اسی طرح گندم اور مکئی کی پیداوار میں بھی اضافہ ہوا ہے، کپاس کی پیداوار میں بھی 81فیصد اضافہ ہوا ہے۔ اپنی بات کو جاری رکھتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ مودی نے بھارت میں کرفیو لگایا تو ہم پر دبائو ڈالا گیا لاک ڈائون لگائو، کرونا کی وجہ سے بھاری کی معیشت منفی 7فیصد پر پہنچ گئی، امریکہ نے لاک ڈائون لگایا تو ان کی بھی معیشت نیچے چلی گئی، معیشت کو اٹھانے کے لیے امریکہ نے چار ہزار ارب ڈالر خرچ کئے، ہم نے اپنی معیشت کو ٹھیک کرنے کے لئے صرف آٹھ ارب ڈالر خرچ کئے، ہم لاک ڈائون سے بچتے رہے اور سمارٹ لاک ڈائون کی طرف گئے، ہم نے انڈسٹریز کو بند نہیں کیا، زراعت کو بچایا۔ مہنگائی کے مسئلے پر وزیر اعظم نے کہا کہ ہمیں مہنگائی کا مسئلہ ہے، میڈیا کا کام تنقید کرنا ہے اس سے معاشرے کا فائدہ ہوتا ہے، میڈیا کو کہتا ہوں کہ وہ جائزہ لے کہ دنیا کے مقابلے میں پاکستان میں مہنگائی کتنی بڑھی، عالمی سطح  پر ضروری اشیا کی قیمتوں میں 50اور پاکستان میں 9فیصد اضافہ ہوا ہے، تیل مہنگا ہوتا ہے تو ساری چیزیں مہنگی ہو جاتی ہیں، پچھلے تین، چار ماہ میں تیل کی قیمت 100فیصد بڑھ گئی ہے، بھارت میں 250روپے اور بنگلہ دیش 200روپے جبکہ پاکستان میں 138روپے لٹر ہے، ہمارا خسارہ بڑھتا جارہا ہے، ہمیں پٹرول کی قیمت بڑھانا پڑے گی۔ کرونا کے بعد قیمتیں نیچے آنے لگیں گی۔ سوائے تیل پیدا کرنے والے ملکوں کے پاکستان میں تیل سب سے سستا ہے۔ پاکستان میں تیل کی قیمت 33فیصد بڑھی ہوئی جبکہ بین الاقوامی سطح پر 100فیصد اضافہ ہوا ہے۔ عمران خان نے کہا کہ اقتصادی اشاریے درست سمت کی جانب گامزن ہیں، مہنگائی کو دیکھتے ہوئے ہم ایک پیکیج لے کر آ رہے ہیں، یہ پیکیج 120ارب روپے کا ہے، جس سے 13کروڑ لوگ مستفید ہوں گے، 6ماہ تک2کروڑ خاندانوں کے لئے گھی، آٹا اور دال کی قیمتوں پر 30فیصد رعایت ملے گی۔ 40لاکھ خاندان کو سود کے بغیر قرض دیں گے۔ کامیاب پاکستان پروگرام کیلئے 1400ارب روپے دیں گے۔ مارچ 2022ئ تک پنجاب میں صحت کارڈ کا اجرا کر دیا جائےگا۔ اپوزیشن پر تنقید کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ 30سال سے جو لوگ پاکستان سے پیسے لوٹ کر باہر لیکر گئے، دو بڑے خاندانوں سے درخواست ہے آدھا پیسے واپس لے آئیں، اس کے بعد کھانے پینے کی چیزوں کی قیمت آدھی کر دوں گا۔ دوسری طرف رحمت اللعالمینػ اتھارٹی کے اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ ہمیں اپنے معاشرے میں مثبت تبدیلیاں لانے کے لئے 1400سال قبل ہمارے نبیػ کی مرتب کردہ شاندار روایات پر عمل کرنا ہوگا۔ ہمیں جدید ذرائع ابلاغ بالخصوص سوشل میڈیا کے ذریعے اپنے نوجوانوں کو غیر اخلاقی اجنبی ثقافت کے حملے سے بچانے کے لئے فوری اقدامات کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ رحمت اللعالمینػ اتھارٹی کے قیام کا مقصد ہماری نوجوان نسل میں اخلاقی اقدار کو بیدار کرنا ہے، جسے انٹرنیٹ کے اس دور میں ہر طرح کے غیر اخلاقی مواد تک آن لائن رسائی حاصل ہے۔ وزیر اعظم نے متعلقہ حکام کو ہدایت کی کہ وہ تحقیق کے ذریعے اس بات کا تعین کریں کہ کس طرح ہمارے نوجوانوں کی کردار سازی کو موثر طریقے سے یقینی بنایا جا سکتا ہے۔ انہوں نے سیرت طیبہ کی شاندار تعلیمات کی روشنی میں سکول، کالج اور یونیورسٹی کی سطح پر طلبا کو تعلیم دینے کے لئے نصاب میں تبدیلیاں متعارف کرانے پر زور دیا۔ مزید برآں وزیر اعظم سے چیف آف نیول سٹاف ایڈمرل محمد امجد خان نیازی  نے ملاقات کی۔ وزیراعظم آفس کے مطابق ملاقات میں پاکستان بحریہ کے پیشہ ورانہ امور پر گفتگو کی گئی۔

عوام کیلئے 120ارب کا ریلیف پیکیجٜ پٹرول مزید مہنگا ہوگا، وزیر اعظم